Wednesday, September 20, 2017

::::::: پانچ خطرناک کُلیے ::::::


::::::: پانچ خطرناک  کُلیے ::::::
بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ
و الصَّلاۃُ والسَّلامُ عَلیٰ رَسولہ ِ الکریم مُحمدٍ و عَلیَ آلہِ وَأصحابہِ وَأزواجِہِ وَ مَن تَبِعَھُم بِاِحسانٍ إِلٰی یَومِ الدِین ، أما بَعد :::
السلام علیکم ورحمہُ اللہ و برکاتہ ُ ،
اِنسانی زندگی میں  بہت سے کام  انتہائی خوفناک نتائج کا سبب ہوتے  ہیں ، دُنیاوی طور پر بھی ، اور اُخروی طور پر بھی ، اور کچھ کام جب ایک دُوسرے کے ساتھ مل جائیں تو اُن کے نتائج بہت ہی خطرناک ہو جاتے ہیں ، آیے آپ کو  ایسے ہی کچھ کُلیوں کے بارے میں بتاتے ہیں  جو کچھ کاموں کے جمع ہونے سے وجود میں آتے ہیں ،  
:::   پہلا کُلیہ  ::: تنہائی+  فراغت   =شیطانی وسوسے،،،
لہذا اگر آپ اپنی تنہائی اور فراغت میں اپنے نفس کو اللہ تعالیٰ اور اُس کے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی اطاعت  میں مشغول نہیں کریں گے تو آپ کا نفس آپ کو اللہ اور اُس کے رسول کریم صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم  کی نافرمانی میں مشغول کر دے  گا،
دُوسرا کُلیہ  ::: غفلت + سوچ  و فکر کو وسوسوں کے ساتھ چھوڑ دینا = گناہ میں مبتلا ہونا،،،
لہذا اگر آپ دِل و دماغ  کو اللہ عزّ و جلّ  کی یاد سے غافل رکھیں گے تو وہ شیطانی و نفسانی وسوسوں کی آماجگاہ بن جائے گا ،  اور پھر ذہنی سوچ و فِکر بھی اُن وساوس کے ساتھ ہو کر چلنے لگیں گے ،  اور  پھر آپ گناہوں میں ملوث ہوتے ہوتے عادی   گناہ گار بن جائیں گے ،
::: تیسرا کُلیہ  ::: نظر کو کھلا چھوڑے رکھنا + حرام اور باعث فتنہ چیزوں کے بارے میں سوچنا =دل و دِماغ کا گندہ ہونا ،،، اور پھر کسی مزید بڑے  گناہ میں جا پھنسنا ،
نظر ابلیس کے زہریلے تیروں میں سے ایک تِیر ہے ، ایسا تِیر جو چلانے والے کو دُوسرے کی نِسبت کہیں زیادہ  گھائل کرتا ہے ، اور ابلیس کے زہر کا شکار بنا ڈالتا ہے، لہذا اگر آپ اپنی نظر کی حفاظت نہیں کریں گے تو اپنے دِل و دماغ کو بھی گناہ سے بچا نہیں پائیں گے ،  
کِسی شاعر نے بہت ہی خُوب کہا ہے کہ :
كلُّ الحوادثِ مَبدأُها مِن النَّظر  :::  ومُعظَمُ النارِ مِنْ مُستَصْغرِ الشَرِرِ
كْم نظرةٍ فعلتْ في قلب صاحبها........ فِعْلَ السهامِ بلا قوسٍ ولا وتـرِ
تمام تر حادثات کی ابتداء نظر کی وجہ سے ہوتی ہے ::: اور آگ کے بڑے بڑے ألاؤ چھوٹی سی چنگاری کے سبب ہوتے ہیں
کتنی نظریں ایسی ہوتی ہیں جو اپنے  مالک کے دِل میں :::  کِسی کمان اور وَتر کے بغیر ہی تِیر والا کام کرتی ہیں ،
::: چوتھا کُلیہ  ::: دِین داروں ، نیکوکار لوگوں کی صُحبت سے دُوری +دُنیاوی مشغولیت میں رہنا= دِل و دماغ میں اللہ کے احکام کی اہمیت ختم  ہونا  ،،،
اِنسان اپنے نفس کے سامنے کمزور ہوتا ہے ، اور اللہ  پاک کی مشیئت سے  اپنے اِیمان اور تقویٰ والے بھائیوں کی صُحبت اللہ  تعالٰی کے احکام کی اہمیت جانتا ہے ، اور اپنے نفس کو قابو کرنے کے گُر سیکھتا ہے ، اور قابو کرتا ہے ،
لہذا اگر آپ اپنے لیے صاحب اِیمان لوگوں میں سے تقویٰ والے لوگوں کی صُحبت حاصل نہیں کریں گے تو  بلا شک و شبہ اپنے نفس کے  ،ابلیس اور اُس کے پیروکاروں کے وسوسوں میں بھٹک جائیں گے ،    اور کبھی کِسی ایسے مُقام تک نہ پہنچ پائیں گے جِس کا کوئی اچھا انجام ہو ، خاص طور پر آپ کی ہمیشہ رہنے والی زندگی میں،
::: پانچواں کُلیہ  ::: چھوٹے  گناہوں کو معمولی سمجھنا +اپنی نیکیوں کو بہت جاننا = اللہ تعالیٰ کی مزید   نافرمانیوں میں پھنسنا اور نیکیوں سے دور ہونا،،،
جو کوئی   اپنے گناہوں کو  گناہ ہی نہیں سمجھتے ، یا اُنہیں کچھ نُقصان والا عمل نہیں سمجھتے ، یا صِرف اللہ تعالٰی کی رحمت اور مغفرت کے مل ہی جانے کے  زعم میں رہتے ہیں ، اور جو کوئی چھوٹی موٹی نیکی کرتے ہیں تو  اُسے بہت کچھ سمجھتے ہیں اور ُاس کے بدلے میں بہت  سا ثواب ملنے کا خیال کیے رکھتے ہیں ، تو نتیجۃً وہ اللہ سُبحانہ ُ و تعالیٰ ناراضگی اور عذاب سے غفلت کا شکار ہوتے ہوتے ، مزید در مزید گناہوں میں دھنستا جاتا ہے ،
لہذا چھوٹے سے چھوٹے گناہ سے بچنے کی بھر پور کوشش کیا کیجیے ، اور اللہ سُبحانہ ُ و تعالیٰ کی رحمت و مغفرت ، غصہ ، ناراضگی اور عذاب ، سب ہی صِفات کو ہمیشہ یاد رکھا کیجیے ،اِن میں سے  کچھ کو بھول جانا اور کچھ کو یاد رکھنا، یا کچھ کے مل جانے اور کچھ سے محفوظ  رہنے کے زعم میں مبتلا رہنے سے بچا کیجیے ، تا کہ اللہ کی محبت، اللہ کی رحمت اور مغفرت کے حاصل ہونے  کی امید بھی رہے ،  اور اس کی ناراضگی اور  عذاب کا خوف بھی رہے ، یہی ایک سچے اِیمان والے کی حالت ہوتی ہے ،
یاد رکھیے وہ شخص جاھل ہوتا ہے جو اپنے نفس کے خیالات کی پیروی کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ  کے بارے میں ایسی اُمیدیں لگائے ہوتا ہے جِن کی اللہ تعالیٰ  اور اُس کے رسول  کریم صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی طرف سے کوئی خبر نہیں ہوتی ،
اللہ تعالیٰ ہم سب کو اور ہر ایک کلمہ گو کو درست عقائد اپنانے اور اُن کےمُطابق دُرُست عمل کرنے کی ہمت دے ،
والسلام علیکم،طلب گارء دُعاء ، عادِل سُہیل ظفر ،
تاریخ کتابت : 07/03/1433ہجری، بمُطابق،30/01/2012عیسوئی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مضمون کا برقی نسخہ درج ذیل ربط پر مُیسر ہے :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Sunday, September 17, 2017

::::: نیکیاں جو درحقیقت ہوتی نہیں ہیں :::::

:::::  نیکیاں جو درحقیقت ہوتی نہیں ہیں  :::::
بِسمِ اللَّہ ،و الصَّلاۃُ و السَّلامُ عَلَی مُحمدٍ الذّی لَم یَکُن مَعہ ُ نبیاً و لا رَسولاً  ولا مَعصُوماً مِن اللَّہِ  و لَن یَکُون  بَعدہُ ، و علی َ أزواجہِ الطَّاھِرات و ذُریتہِ و أصحابہِ و مَن تَبِعھُم بِإِحسانٍ إِلیٰ یِوم الدِین ،
شروع اللہ کے نام سے ، اور اللہ کی رحمتیں اور سلامتی ہواُس محمد پر ، کہ جن کے ساتھ  اللہ کی طرف سے نہ تو کوئی نبی تھا ، نہ رسول تھا، نہ کوئی معصوم تھا ، اور اُن کے بعد بھی ہر گِز کوئی ایسا ہونے والا نہیں ، اوراللہ کی رحمتیں اور سلامتی ہو محمد رسول اللہ  کی  پاکیزہ بیگمات پر، اور اُن کی اولاد پر ،اور اُن کے صحابہ پر ، اور جو کوئی بھی ٹھیک طرح سے ان سب کی پیروی کرے اُس پر ۔
ایک دفعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم اپنی مسجد شریف میں تشریف فرما تھے کہ ایک بدوی صحابی رضی اللہ عنہ ُ داخل ہوئے  اور نماز پڑھنے لگے ، نماز پڑھ کر جب وہ صحابی رضی اللہ عنہ ُ نبی اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور سلام عرض کیا ،
رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے اِرشاد فرمایا (((((وَعَلَيْكَ السَّلاَمُ فَارْجِعْ فَصَلِّ ، فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ ::: اور تُم پر بھی سلامتی ہو ، اورواپس جاؤ(اور اپنی نماز دوبارہ پڑھو ) کیونکہ تُم نے نماز نہیں پڑھی )))))،
وہ چونکہ ایک صحابی تھے ، خواہ بدوی تھے ، اور ہمیشہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی خدمت میں حاضر رہنے والوں میں سے نہ تھے ، ہماری طرح اپنے مزاج ، اپنی سوچوں ، اپنے افکار ، اور اپنے خود ساختہ فسلفوں کے پیروکار نہ تھے ، پس کوئی سوال کیے بغیر ، کوئی بحث کیے بغیر ، کوئی منطق و فسلفہ بِگھارے بغیر  اُسی جگہ واپس گئے جہاں نماز پڑھی تھی اور دوبارہ نماز پڑھی ،
دوبارہ نماز پڑھنے کے بعد پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اورسلام عرض کیا   تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے سلام کا جواب دینے کے بعد پھر اِرشاد فرمایا (((((وَعَلَيْكَ السَّلاَمُ فَارْجِعْ فَصَلِّ ، فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ ::: اور تُم پر بھی سلامتی ہو ، اورواپس جاؤ(اور اپنی نماز دوبارہ پڑھو ) کیونکہ تُم نے نماز نہیں پڑھی )))))،
 صحابی رضی اللہ عنہ ُ پھر کسی چُوں چَراں کے بغیر واپس گئے اور نماز پڑھی ، انہیں اسی طرح تین دفعہ واپس پلٹایا گیا ، تیسری دفعہ نما زپڑھنے کے بعد صحابی رضی اللہ عنہ ُ  نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی خدمت میں سلام پیش کی تو جواب کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے پھر وہی  اِرشاد فرمایا ،
صحابی رضی اللہ عنہ ُ نے کوئی عُذر کرنے کی بجائے ، کوئی نقص نکالنے کی بجائے ، کوئی بہانہ سازی کیے بغیر ، کوئی فسفلہ بِگھارے بغیر ، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی خدمت میں انتہائے ادب اور اِیمان سے بھرپور الفاظ میں درخواست کی  """وَالَّذِى بَعَثَكَ بِالْحَقِّ فَمَا أُحْسِنُ غَيْرَهُ فَعَلِّمْنِى  ::: اُس کی قَسم جِس نے آپ کو حق کے ساتھ مبعوث فرمایا ہے ، میں اس سے زیادہ اچھے طور پر نماز نہیں پڑھ سکتا ، لہذا آپ مجھے تعلیم عنایت فرمایے  """  
تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے  کچھ سخت سُست بات نہیں فرمائی ، کوئی ڈانٹ ڈپٹ نہیں کی ، بلکہ (((وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا رَحْمَةً لِلْعَالَمِينَ ::: اور ہم نے تو آپ کو دونوں جہانوں کے لیے رحمت بنا کر بھیجا ہے))) کی عملی تفیسر کرتے ہوئے ، شفقت ،محبت اور نرمی کے ساتھ اِرشاد فرمایا ( ((إِذَا قُمْتَ إِلَى الصَّلاَةِ فَكَبِّرْ ، ثُمَّ اقْرَأْ مَا تَيَسَّرَ مَعَكَ مِنَ الْقُرْآنِ ، ثُمَّ ارْكَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ رَاكِعًا ، ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَعْتَدِلَ قَائِمًا ، ثُمَّ اسْجُدْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ سَاجِدًا ، ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ جَالِسًا ، ثُمَّ اسْجُدْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ سَاجِدًا ، ثُمَّ افْعَلْ ذَلِكَ فِى صَلاَتِكَ كُلِّهَا:::جب تُم نماز پڑھنے  کے لیے کھڑے ہو تو (سب سے پہلے) تکبیر کہو ، پھر قران میں سے جو کچھ آتا ہو وہ پڑھو ، پھر اتنی دیر رکوع کرو  کہ تُم رکوع کی حالت میں  اطمینان پا جاؤ ، پھر سیدھے کھڑے ہو جاؤ یہاں تک کہ تُم اس حالت میں اطمینان پا جاؤ ، پھر اتنی دیر تک سجدہ کرو کہ تُم سجدے کی حالت میں اطمینان پا جاؤ ،پھر (سجدے سے)اُٹھ جاؤ یہاں تک بیٹھنے کی حالت میں اطمینان پا جاؤ ، پھر اتنی دیر تک سجدہ کرو کہ تُم سجدے کی حالت میں اطمینان پا جاؤ ،پھر اپنی ساری نماز میں اسی طرح کرو)))صحیح البُخاری /حدیث6251/کتاب بدء السلام /باب18، صحیح مُسلم/حدیث 911/کتاب الصلاۃ   /باب 11،سنن الترمذی / حدیث304/کتاب الصلاۃ/باب114، سنن ابؤ داؤد/حدیث856/کتاب الصلاۃ/باب150،
اس حدیث شریف  میں ہمیں بہت سے اسباق ملتے ہیں ، لیکن میں یہاں صِرف یہ بتانا چاہتا ہوں کہ بسا اوقات ایسا بھی ہوتا ہے ، بلکہ ہم جیسوں کی زندگی میں تو اکثر اوقات ایسا ہی ہوتا ہے کہ ہم بہت سے کام  ایسے کرتے ہیں  جو عبادات اور نیک اعمال میں سے ہوتے ہیں لیکن انہیں کرنے کی کیفیت  ایسی ہوتی ہے کہ نیک نیتی کے باجود وہ کام نامکمل اور اللہ کے ہاں نا مقبول ہوتے ہیں ، کیونکہ ان کاموں کو اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی سُنّت مبارکہ کی موافقت کی بجائے اپنی عقل و سوچ ، سمجھ و فلسفے کی موافقت میں کیا جاتا ہے ، پس وہ عمل نیکی نہیں ہو پاتے ،
اس حدیث کی  شرح کے طور پر اپنے الفاظ میں کچھ کہنے کی بجائے اُمت کے عظیم ترین لوگوں کے چند اقوال پیش کرنا ہی زیادہ بہتر سمجھتاہوں اور یقین رکھتا ہوں کہ اُن کی باتوں میں اللہ نے کہیں زیادہ خیر رکھی ہے ، اللہ ہم سب کو اس خیر میں سے وافر عطاء فرمائے ،
دوسرے بلا فصل خلیفہ أمیر المؤمنین عُمر الفاروق رضی اللہ عنہ ُ نے فرمایا """کوئی ایسا بھی ہوتا ہے جو اِسلام میں ہی بوڑھا ہوجاتا ہے(یعنی ساری زندگی ہی مُسلمان کی حیثیت سے گذارتا ہے )لیکن اُس نے اللہ کے لیے ایک  رکعت بھی مکمل نہیں کی ہوتی """،
پوچھا گیا """یہ کیسے أمیر المؤمنین ؟"""،
 جواب میں اِرشاد فرمایا """کیونکہ وہ (نماز میں ایک)رکعت  میں (بھی)رکوع اور سجدے مکمل (ٹھیک طور پرادا) نہیں کرتا"""،
ابو ہُریرہ رضی اللہ عنہ ُ کا فرمان ہے """ کچھ لوگ ایسے بھی ہوتے ہیں جو ساٹھ سال تک نماز پڑھتے رھتے ہیں لیکن اس کی کوئی نماز قبول نہیں ہوتی """،
 اُن سے پوچھا گیا """یہ کیسے ؟ """،
 ابو ہُریرہ رضی اللہ عنہ ُ نے جواباً  فرمایا """ یہ وہ نمازی ہے جو نماز میں رکوع ، سجدے ، قیام اور خشوع مکمل طور پر نہیں کرتا """
اِمام احمد بن حنبل رحمہُ اللہ نے فرمایا """لوگوں پر ایسا وقت آنا ہے جِس میں لوگ نماز پڑھتے دکھائی دیں گے لیکن نماز پڑھتے نہ ہوں  گے،مجھے اس بات کا ڈر ہے کہ وہ زمانہ یہی ہمارا زمانہ ہوگا"""
امام الغزالی رحمہُ اللہ کا فرمان ہے """لوگوں میں ایسے بھی ہیں جو سجدہ کرتے ہوئے یہ گمان رکھتے ہیں کہ وہ اُس سجدے کے ذریعے اللہ کا قُرب حاصل کر رہے ہیں ، اور اللہ کی قَسم اگر اُس سجدے کا گناہ اُس شخص کے شہر  کے باسیوں پر بانٹ دیا جائے تو سب ہی ھلاک ہو جائیں """،
امام صاحب رحمہُ اللہ سے پوچھا گیا """ایسا کیوں ؟ """،
 تو جواب میں اِرشاد فرمایا """کیونکہ وہ سجدہ کرنے والا اپنا سر تو اپنے مولا کے سامنے جھکاتا ہے لیکن اُس کا دِل بےکار کاموں اورباتوں میں ، اور گناھوں ، اور لالچ و ہوس ، اور دُنیا کی محبت میں مشغول ہوتا ہے ، تو بھلا تُم ہی بتاؤ یہ کیسا سجدہ ہے ؟ """
کچھ ایسی ہی حالت کو علامہ اقبال رحمہ ُ اللہ نے ان الفاظ میں تعبیر کیا :::
جو میں سر بسجدہ ہوا کبھی تو زمیں سے آنے لگی صدا
ترا دل تو ہے صنم آشنا، تجھے کیا ملے گا نماز میں
غو ر تو کیجیے کہ اِن حالتوں میں سے کون سی حالت ہماری حالت ہے ، یا ہماری حالت کے قریب ترین ہے ؟
اور ہماری نمازوں ، ہماری دیگر عِبادات ، ہمارے نیک کاموں میں سے کتنے ایسے ہیں جو بظاہر تو ادا ہوتے ہیں لیکن درحقیقت ادا نہیں ہوتے ، اور اِس حال میں ہوتے ہیں کہ اُنہیں پھر سے دُہرایا جائے کہ وہ نہ ہونے کے برابر ہوتے ہیں ، اللہ کے ہاں قابل قُبول نہیں ہوتے ،
اللہ تعالیٰ  ہمیں توفیق عطاء فرمائے کہ ہم اپنی نیکیوں کو اُس کے ہاں قُبول ہونے والی کیفیات میں مکمل کر سکیں ،   والسلام علیکم،
طلب گارء دُعاء ،
عادِل سُہیل ظفر ،
تاریخ کتابت : 05/01/1433ہجری، بمُطابق،30/11/2011عیسوئی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مضمون کا برقی نسخہ درج ذیل ربط پر مُیسر ہے :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔